BREAKING NEWS

مدینی میں دہشت گردی میں واببی دہشت گردی کے معصوم شیعہ بچے کی قتل کے لئے سینئر شیعہ عالم کی مضبوط ردعمل

مدینی میں دہشت گردی میں واببی دہشت گردی کے معصوم شیعہ بچے کی قتل کے لئے سینئر شیعہ عالم کی مضبوط ردعمل
11 Feb
12:12

ایران کے مقدس شہر قم میں سینئر شیعہ عالم دین آیت اللہ صافی گلپايگاني نے مدینہ میں 7 سالہ معصوم شیعہ بچے کے قتل پر سخت رد عمل دی ہے.

موصولہ رپورٹ کے مطابق آیت اللہ صافی گلپايگاني نے 7 سالہ معصوم “ذكرريا بدر علی الجابر” کی ایک وہابی دہشت گرد کی طرف سے بنایا قتل پر اپنا غصہ ظاہر کرتے ہوئے سوال کیا ہے کہ، کیوں بین الاقوامی برادری اور اسلامی ممالک کے حکمران اور افسر خاص طور سعودی عرب کی حکومت نے اس ظالمانہ اور ظالمانہ جرم پر خاموش بنا دیا ہے.

خبر ایجنسی کے فارس کے مطابق، آیت اللہ صافی گلپانی نے مردہ بچے کے خاندان کو اس کی تعزیت کا اظہار کیا اور اس بچے کے لئے خصوصی دعا کی ہے. انہوں نے کہا کہ جب میں نے اس خبر کو سنا تو میں یقین نہیں کر سکا کہ معصوم بچہ کا قتل صرف بے رحم ہو گیا کیونکہ یہ شیعہ مسلمان تھا. آیت اللہ صافی گلپايگاني نے کہا کہ یہ زیادہ المناک کی بات ہے کہ اس جگہ پر اس معصوم بچے کے قتل کی گئی جہاں پیغمبر اسلام (ص) پر الہی پیغام یعنی “وہی” اترتی تھی.

آیت اللہ صافی نے کہا کہ یہ سنگین جرم ایک ایسے شخص نے انجام دیا جو نہ انسان ہے اور نہ ہی مسلمان، جس سے یہ آسانی سے سمجھا جا سکتا ہے کہ کس طرح ایک انسان جو اپنی زندگی ایسے مقام پر بسر کر رہا ہے جو اس دنیا کی سب سے مقدس مقامات میں سے ہے اور جو قرآن پاک کے نازل ہونے کا مرکز ہے اور پیغمبر اسلام کے روضہ کے قریب ہے لیکن ان سب کے باوجود وہ انسان نہ بن کر ایک جانور سے بھی بدتر ہو گي .

آیت اللہ صافی گلپايگاني نے اپنے پیغام میں کہا کہ، کیا ان شریروں کی گندی دلوں میں جو جانور سے بھی بدتر ہیں، تھوڑی سی بھی رحم اور ہمدردی نہیں ہے؟ انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی برادری اور اسلامی ممالک کی حکومتیں، خاص طور پر سعودی عرب، اس ظالمانہ جرائم پر خاموشی کیوں سادھے ہوئے ہے، کیا ایسے لوگ اپنی خاموشی سے یہ ثابت نہیں کر رہے ہیں کہ وہ ایسے سنگین جرائم کی حمایت کرتے ہیں؟

« »

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *